سالوں سے خواتین کی تقدیریں بدل رہی ہیں 25
مذہبی مقامات کی آثارِ قدیمہ کے حوالے سے حیثیت کو نظر انداز کیا جا رہا ہے
مارچ 3, 2021
قبائلی خواتین کی موجودہ صورتِ حال
مارچ 3, 2021

سالوں سے خواتین کی تقدیریں بدل رہی ہیں 25

پشاور کے علاقے تہکال میں باجی نسرین کے گھر مسلسل رونق کی جگہ اب کسی انجان خاموشی نے لے لی ہے۔ 25 سالوں سے ان کا گھر ایک ایسے مرکز کے طور پر چل رہا ہے جہاں ہر عمر کی لڑکیاں اور خواتین دستکاری سیکھنے کے ساتھ ساتھ مختلف مضامین کی تعلیم حاصل کرتی ہیں۔
نسرین کا کنبہ 1987 میں تہکال کی مسیحی کالونی میں آباد ہوا تھا اور آج ان کے اہل خانہ کی کاوشوں کی بدولت، کالونی کی زیادہ تر خواتین باخبر اور تعلیم یافتہ ہیں۔اپنے سفر کو یاد کرتے ہوئے نسرین نے بتایا کہ 1996 میں دو غیر ملکی خواتین نے علاقے کی خواتین کو تعلیم فراہم کرنے میں ان کی مدد لی۔ انہوں نے آگاہ کیا کہ وہ فوراً ان کے ساتھ کام کرنے پر آمادہ ہو گئیں اور اپنے ہی گھر میں ایک سیکھنے کا مرکز قائم کیا جہاں انہوں نے مقامی عمر رسیدہ خواتین کو عملی اور درسی دونوں طرح کا علم اور مہارت فراہم کی۔
جب غیر ملکی دو سال بعد چلے گئے تو نسرین نے اس منصوبے کو جاری رکھا۔ انہوں نے یاد کیا کہ چرچ میں کتنی ہی خواتین بائبل کو پڑھ نہیں سکیں گی کیونکہ وہ ان پڑھ تھیں۔ یہ ان کی ترغیب کا باعث بنیں اور انہوں نے اس بات کا عزم کیا کہ ان کے پڑوس کی ہر عورت پڑھنے لکھنے کے قابل ہوسکے گی اور وہ غیر ہنر مند نہیں رہے گی۔
کئی دہائیوں تک انہوں نے ہر طرح کی مشکلات کے باوجود یہ سلسلہ جاری رکھا لیکن یہ حالیہ کرونا وائرس عالمی وبا تھی جس نے ان کی جدوجہد کو روک دیا۔ تاہم نسرین آئندہ ماہ سے تمام ضروری احتیاطی تدابیر اختیار کرتے ہوئے اپنے گھر میں کلاسیں دوبارہ کھولنے کا ارادہ رکھتی ہیں کیونکہ اس پروگرام کو جاری رکھنا لازم ہے۔
دلچسپ بات یہ ہے کہ اس کا ایک کمرے کاسکول صرف اس علاقے کے مسیحی باشندوں تک ہی محدود نہیں ہے بلکہ مقامی مسلمان عالم کی بیٹیاں بھی ان کے گھر آتی ہیں کیونکہ قریبی افغان مہاجرین کی بستیوں کی خواتین بھی مختلف مہارتیں جیسے سلائی اور دستکاری سیکھنے کے لئے یہاں آتی ہیں۔
انہوں نے زور دے کر کہا کہ وہ اعلیٰ تعلیم نہیں دے سکتیں لیکن جو کچھ وہ حاصل کرنے کے لئے کر سکتی ہیں، وہ اس بات کو یقینی بنانا ہے کہ یہ خواتین غریب، ناخواندہ اور بے خبر نہ رہیں۔
نسرین کا خیال ہے کہ تعلیم کو کسی کی عمر، مذہب یا ذات سے نہیں جوڑنا چاہئے۔
انہوں نے کہا کہ ہر مرد اور عورت اپنی تعلیم کا سفر زندگی کے کسی بھی مرحلے پر شروع کرسکتے ہیں، انہوں نے مزید کہا کہ جو عورت خواندہ اور ہنر مند ہے وہ نہ صرف اپنی زندگی میں ایک مضبوط انسان بن سکتی ہے بلکہ معاشرے کا پیداواری حصہ بھی بن سکتی ہے۔

Category: پانچواں کے پی |

Comments

All comments will be moderated, and comments deemed uninformative or inappropriate may not be published. Comments posted herein do not in any way reflect the views and opinions of the Network.

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے